118

سعودی عرب کی فوج میں پہلی بار خواتین کی بھرتیاں

سعودی خواتین کو فوج کے مختلف شعبوں میں سپاہی سے لے کر اونچے رینک تک عہدے دئے جائیں گے،رپورٹ
ریاض( لاہور پوسٹ) سعودی وزارت دفاع نے فوج میں بھی خواتین کیلئے ملازمتوں کے دورازے کھول دیئے۔سعودی عرب میں وڑن 2030 کے تحت زندگی کے تمام شعبوں میں خواتین کو بااختیار بنانے کیلئے پہلی مرتبہ دفاع کے شعبے میں خواتین کیلئے روزگار کے مواقع کا اعلان کیا ہے۔سعودی اخبار کی رپورٹ کے مطابق سعودی خواتین کو فوج کے مختلف شعبوں میں سپاہی سے لے کر اونچے رینک تک عہدے دئے جائیں گے۔گزشتہ سال سعودی عرب نے اینٹی نارکوٹکس، کرمنل انویسٹی گیشن، کسٹمز اور پریزن سسٹم جیسی پبلک سیکیورٹی سے جڑی سیکیورٹی فورسز میں خواتین کو بھرتی کرنے کی اجازت دی تھی۔یہ اقدامات سعودی والی عہد محمد بن سلمان کے وڑن 2030 پروگرام کے تحت سعودی عرب کو ایک لبرل اور آزاد خیال ریاست کے طور پر پیش کئے جانے کیلئے اٹھائے جارہے ہیں۔ریسات کی افواج میں سعودی خواتین کی بھرتیاں اس لئے بھی کی جارہی ہیں کہ یمن جنگ میں سعودی افواج کو بھاری نقصان اٹھانا پڑ رہا ہے، جبکہ فوج کا زیادہ تر انحصار کرائے کے غیر ملکی فوجیوں پر ہے۔گزشتہ ہفتے ہی تقریبا دو ہزار سعودی فوجیوں نے حوثی باغیوں کے سامنے ہتھیار ڈال دئے تھے۔ جبکہ سینکڑوں کارروائی کے دوران مارے گئے تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں