42

فلیگ شپ ریفرنس: نیب کو نئی دستاویزات پیش کرنے کی اجازت

احتساب عدالت نے فلیگ شپ ریفرنس میں نئی دستاویزات پیش کرنے کی نیب کی درخواست منظور کر لی۔ عدالت نے نیب کو نئی دستاویزات پیش کرنے کی اجازت دے دی۔

احتساب عدالت میں نواز شریف کے خلاف فلیگ شپ ریفرنس میں نیب کی جانب سے نئی دستاویزات پیش کرنے کی درخواست پر سماعت ہوئی۔ نیب نے عدالت سے آف شور کمپنیوں کے ملکیتی فلیٹس کی دستاویزات جمع کرانے کی استدعا کی، برطانیہ نے حسن نواز کی آف شور کمپنیوں اور پراپرٹیز کا ریکارڈ نیب کے حوالے کیا تھا۔ نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث نے اضافی دستاویزات ریکارڈ پر لانے کی مخالفت کی۔

دوران سماعت نواز شریف کے وکلاء اور نیب پراسیکوٹر کے درمیان تلخ کلامی بھی ہوئی۔ خواجہ حارث نے کہا میڈیا سے معلوم ہوا سوال نامہ نیب کے پاس موجود ہے، یہ ثابت کریں کہ اگر خبر غلط ہے تو میں الفاظ واپس لوں گا، واجد ضیاء آدھا آدھا گھنٹہ ریکارڈ دیکھ کر جواب لکھاتے رہے ہم نے اعتراض نہیں کیا، ہماری باری نیب کو پیٹ میں درد ہوجاتا ہے۔ نیب پراسیکیوٹر سردار مظفر نے کہا آپ ذاتی حملے کر رہے ہیں، ہم قانون پر عمل کریں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں